qaumikhabrein
Image default
ٹرینڈنگسیاستقومی و عالمی خبریں

فلم کشمیر فائلس سے شیعوں میں سخت ناراضگی۔قابل اعتراض مناظر ہٹانے کا مطالبہ

فلم کشمیر فائلس کا ٹڑیلر رلیز ہو گیا ہے۔ اس ٹریلر نے شیعوں میں غصے کی لہر دوڑا دی ہے۔ زی اسٹوڈیو کے ذریعے تیار یہ فلم تیرہ مارچ کو رلیز ہونے والی ہے۔ اس فلم میں شیعہ مسلمانوں کو دہشت گردانہ کاروائیوں میں ملوث دکھایا گیا ہے۔ ایران کے انقلابی لیڈر امام خمینی کی تصویر کو بھی جس طریقے سے استعمال کیا گیا ہے اس سے ہندستان اور ایران کے رشتو ں میں تلخی پیدا ہونے کے آثار ہیں.

امام خمینی کی تصویر دہشت گردی برپا کرنے والی بھیڑ کے درمیان دکھائی گئی ہے جس سے تاثر دینے کی کوشش کی گئی ہیکہ دہشت گردانہ کاروائیوں میں ملوث افراد امام خمینی کے عقیدت مند ہیں۔ شیعہ مذہبی لیڈروں اور عام شیعوں کی جا نب سے فلم سے اس قسم کے مناظر ہٹانے کا مطابہ کیا جارہا ہے۔ کشمیر فائلس فلم کے ٹریلر میں دہشت گردوں کا غول جہاد کے نام پر پنڈتوں کے قتل عام کی بات کرتانظر آرہا ہے اور پنڈتوں کے خون کی پیاسی ہتھیار بند بھیڑ میں ایک شخص کے ہاتھوں میں امام خمینی کا پوسٹر نظر آرہا ہے۔ اس سے یہ تاثر پیدا ہوتا ہیکہ جیسے امام خمینی اس دہشت گرد بھیڑ کے ہیرو ہیں.

امام خمینی صرف ایران کے ہی مذہبی لیڈر نہیں تھے بلکہ دنیا بھر کے شیعوں کے دلوں میں انکے لئے بے پناہ عقیدت موجود ہے۔ دنیا بھر میں کہیں بھی شیعہ مسلمان کسی قسم کی دہشت گردانہ کاروائیوں میں شامل نہیں رہے ہیں بلکہ وہ تو افغانستان، پاکستان، نائجیریا جیسے ملکوں میں دہشت گردانہ حملوں کا نشانہ بنتے رہے ہیں۔ کشمیر کے شیعہ مسلمان بھی کبھی دہشت گردی میں شامل نہیں رہے بلکہ قیام امن کی کوششوں میں انہوں نے ہندستانی حکومت اور فوج کے ساتھ تعاون کیا ہے۔ کشمیر فائلس فلم سے ہندستان اور ایران کے دوستانہ رشتوں کو نقصان پہونچنے کا اندیشہ ہے.

خود کشمیر کے ہندو پنڈت فلم میں شیعوں کی کردار کشی کئے جانے سے ناراض ہیں۔انکا کہنا ہیکہ وادی کے شیعہ مسلمانوں نے ہمیشہ انکا ساتھ دیا ہے۔انکی جانیں بچائی ہیں۔ اپنے گھروں میں انہو ں نے انہیں پناہیں دی ہیں۔ فلم کے ڈائریکٹر وویک اگنی ہوتری ہیں۔ لکھنؤ میں مولانا کلب جواد نے شیعوں کی کردار کشی کئے جانے پر سخت ناراضگی ظاہر کی ہے.

۔انہوں نے رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہیکہ فلم میں دہشت گردانہ کاروئیوں میں امام خمینی کے پوسٹر کا استعمال منظم عالمی سازش کا حصہ ہے۔ مولانا کلب جواد نے وزیر خارجہ ایس جے شنکر اور وزیر اطلاعات و نشریات انوراگ ٹھاکر کو خط لکھ کر فلم سے شیعوں کے جزبات کو ٹھیس پہونچنے کا سبب بننے والے مناظر ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے۔

Related posts

بنتے بگڑتے محاذوں کی سیاست۔۔۔تحریر۔سراج نقوی

qaumikhabrein

خواتین اگر بی بی زہرا کی سیرت پر عمل کریں تو گھریلو جھگڑوں کا خاتمہ ہو سکتا ہے۔

qaumikhabrein

اردو شعر و ادب کا مستقبل تابناک ہے۔نئی نسل کو اردو سے جوڑنا ہماری اولین ذمہ داری۔۔ ڈاکٹرتقی عابدی۔

qaumikhabrein

Leave a Comment